260

انسانیت کے محافظ!

کورونا کے نئے تیور نے پوری دنیا کے معاشی اور انتظامی نظام کو تہہ و با لا کرکے چھوڑ دیا ہے۔اس عالمی وبا میںکئی شعبہ جا ت نے نمایاں طور عوام کی راحت رسانی کے لئے اپنی جانوں تک کو خطرے میں ڈال دیا لیکن جہاں بات آتی ہے شعبہ صحت کی تو اس صورتحال میں ساری نظریں انہیں پر مرکوز رہیں۔یہ ایک ڈاکٹرہی ہے جو جانتا ہے طبی بہران سے کیسے نپٹا جا سکتا ہے کہ کس صورتحال میں کیا کرنا ہے ، اور نقصان کو کم سے کم کرنے کا طریقہ کیا ہے۔ جس طرح ڈاکٹروں نے اس وباءکے دوران اپنی جان کو خطرے میں ڈال دیا ، ہم نے انہیں اس جنگ میں صف اول کے سپاہیوں کا خطاب دیا۔ فیصلہ سازی کے عمل میں ڈاکٹروں کو شامل نہ کرنا جس طرح سے ہونا چاہئے تھا، وہ جموں و کشمیر میں ایک گہری انتظامی کج فہمی کو اجاگر کرتا ہے۔ہم نے ہر چیز کو الٹا کردیا ہے اور ہم ہمیشہ چیزوں کو امن و قانون کے معاملات کے زاوئے سے دیکھنے کے عادی ہوچکے ہیں۔ موجودہ منظر نامہ میںانتظامیہ میں ہمارے پاس افسران موجود ہیں جو فیصلے کرتے ہیں اور ڈاکٹروں کو محض ان فیصلوں پر عملدرآمد کرناپڑتا ہے جو موجودہ صورتحال میں کسی بڑے جرم سے کم نہیں ہے۔اس کو اگر یوں کہاجائے کہ یہ کار نجار بدست گلکار والا معاملہ ہے تو بیجا نہ ہوگاکیونکہ جس سے ہم پالیسی سازی کروارہے ہیں،وہ اس شعبہ کی ابجد سے بھی واقف نہیں ہیں اورجو پالیسی ردعمل کا تعین کرنے کی صلاحیت اور اہلیت رکھتے ہیں ،ا±نہیں صرف اوپر سے ٹھونسے گئے فیصلوں پر عملدرآمد کرنے کیلئے رکھاگیا ہے۔حقیقت میںہمارے پاس یہ ایک انتہائی افسوسناک خبر ہے کہ ایک ہی دن میں50 کے قریب ڈاکٹروں نے اپنی جان کورونا وائرس کی وجہ سے کھو بیٹھے۔ صرف اس جاریہ دوسری کورونا لہر کے دوران ملک میں اب تک269ڈاکٹر کووڈ کی وجہ سے لقمہ اجل بن گئے جبکہ پہلی لہر میں748ڈاکٹروں کو اس وبائی بیماری کی وجہ سے اپنی متاع حیات سے ہاتھ دھو نا پڑا تھا۔مجموعی طور پر اب تک ملک میں اس وباءکی وجہ سے ہم نے ایک ہزار سے زیادہ ڈاکٹروں کو کھویا ہے جس سے یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں ہے کہ ڈاکٹروں نے کس طرح لوگوں کی جان بچانے کیلئے اپنی جانوںکا نذرانہ پیش کیا ہے۔ اگر یہ معاملہ ہے تو کیوں ان کو ہر حال میں اس بحران میںہماری رہنمائی کرنے کی ذمہ داری نہ دی جائے لیکن بدقسمتی سے جموں و کشمیر میں ہم نے دیکھا ہے کہ ڈاکٹروں کو اس جنگ میںدیوار سے لگادیا ہے اور ا±ن سے سپاہیوں کا کام تو لیاجاتا ہے لیکن ا±ن سے کوئی مشورہ نہیں کیاجاتا ہے بلکہ اصل کمانڈ انتظامیہ کے ہاتھ میں دی گئی ہے۔ کوڈ کی ایک اور لہرکے توقع میں سینئر ڈاکٹروں کے پینل کی تشکیل ایک خوش آئند اقدام ہے ، لیکن اس میںبھی بہت دیر ہو چکی ہے۔ اور اس پینل کوکتنے اختیارات دئے جاتے ہیں،ا±س سے ہمیں پتہ چلے گا کہ آیاوہ اختیارات انتہائی قلیل بھی ہیں یا سرے سے ہی نہیں۔ ہم نے دیکھا ہے کہ جب بھی انتظامیہ کا کوئی افسر کسی ہسپتال کا دورہ کرتا ہے تو میڈیکل کالجوں کے پرنسپلوںاور اعلیٰ صحت کے اداروں کے ڈائریکٹروںکو کس طرح ان کی آﺅبھگت کرنا پڑرہی ہے۔حد ہے کہ ایک انتظامی افسر ہسپتال کا دورہ کرتا ہے اور اس طبی ادارے کا پرنسپل کا سربراہ شعبہ اس افسر کو ایسے بریف کرتا ہے جیسے وہ مالک ک±ل ہو۔یہ انتہائی افسوسناک صورتحال ہے۔اصل میں اس کے بالکل الٹ اور برعکس ہونا چاہئے تھا۔ پوری انتظامیہ کو ڈاکٹروں کی خدمت میں ہونا چاہئے تھا۔ یہ فیصلہ کرنے کے لئے ڈاکٹروں کو چھوڑ دینا چاہئے تھا کہ کون سی سہولیات کی کب اور کہاں ضرورت ہے۔ ڈاکٹروں کو چاہئے تھا کہ وہ ہسپتالوں کے اندر اور باہر تمام پروٹوکولز پر ہماری رہنمائی کرتے۔ انتظامیہ کے لوگوں کو اس بات کا یقین کرنے کے لئے وہاں ہونا چاہئے تھا کہ ضروری کارروائی کی جارہی ہے۔ یہ بحران ابھی ختم ہونے سے کوسوں دور ہے۔ اگر اس کا موثر انداز میں انتظام کرنا ہے تو آئیے ڈاکٹروں کو حقیقی معنوں میں اس سے نمٹنے کی باگ ڈور دیں اور انہیں کمانڈ اینڈ کنٹرول پر مامور کیاجائے۔ آئیے ہم اس نوآبادیاتی ذہنیت کو چھوڑ دیں اور بحران سے نمٹنے کی پیشہ ورانہ اہمیت کو سمجھیں۔ انتظامیہ کو وہی کرنا چاہئے جو اس سے مطلوب ہے اور وہ ہے لوگوں کی روزی روٹی پر لاک ڈاو¿ن کے منفی اثرات کا خیال رکھنا۔اس کے علاوہ انتظامیہ کا یہ کام ہوناچاہئے کہ وہ اپنے ہسپتالوں کے لئے وسائل کا بندوبست کریںاور انہیں ڈاکٹروں کے اختیار میں دیں۔ ڈاکٹروں کے پینل کو بھی اپنے پیشہ ورانہ معلومات پر قائم رہنا چاہئے، چاہے اس کا مطلب ہی سیاسی طور پر غلط ہونابھی ہو۔ کورونا وباءایک طبی بحران ہے۔ اگرکسی کو بھی اس بے مثال صورتحال سے نمٹنے کے لائق سمجھا جاتا ہے تو وہ اس طبی شعبے سے جڑے لوگ ہی ہیں۔لہٰذا انہیں اپنے کام کو بطریق احسن نبھانے میں کسی کی بے جا مداخلت کو خاطرمیں نہیں لا نا چاہئے اور اپنے تفویض شدہ اختیارات کو بہتر طریقے سے استعمال میں لا نا چاہیئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں