84

کوچنگ سینٹر کی خامیاں

با با بشیر احمد سیرین
رعنا واری سرینگر
6006429425
bababashor431@gmail.com

محدود توجہ:
کوچنگ مراکز میں اکثر ایک مقررہ نصاب اور تدریسی طریقہ کار ہوتا ہے، جو انفرادی طلباء کی مخصوص ضروریات اور سیکھنے کے انداز کو پورا نہیں کر سکتا۔ اس کے نتیجے میں کچھ طلباء پیچھے رہ جاتے ہیں یا وہ ذاتی توجہ حاصل نہیں کر پاتے جس کی انہیں ضرورت ہوتی ہے۔
مرکز پر انحصار:
کوچنگ مراکز میں شرکت کرنے والے طلباء اپنی تعلیمی کامیابی کے لیے مرکز پر منحصر ہو سکتے ہیں۔ یہ ان کی آزادانہ مطالعہ کی مہارتوں اور خود نظم و ضبط کو فروغ دینے کی صلاحیت کو روک سکتا ہے۔
لچک کا فقدان:
کوچنگ مراکز میں عام طور پر مقررہ نظام الاوقات ہوتے ہیں اور ہو سکتا ہے کہ وہ وقت یا احاطہ کیے گئے مضامین کے لحاظ سے زیادہ لچک کی اجازت نہ دیں۔ یہ ان طلباء کے لیے تکلیف دہ ہو سکتا ہے جن کے پاس دیگر وعدے ہیں یا وہ مضامین کی ایک وسیع رینج کا مطالعہ کرنا چاہتے ہیں۔
زیادہ اخراجات:
کوچنگ سینٹرز مہنگے ہو سکتے ہیں، خاص طور پر اگر طلباء کو متعدد سیشنز یا مضامین میں شرکت کی ضرورت ہو۔ یہ خاندانوں کے لیے مالی بوجھ پیدا کر سکتا ہے، خاص طور پر ان لوگوں کے لیے جن کے پاس محدود وسائل ہیں۔
مسابقت اور دباؤ:
کوچنگ سینٹرز اکثر اعلیٰ کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والے طلباء کو اپنی طرف متوجہ کرتے ہیں، جو ایک انتہائی مسابقتی اور دباؤ والا ماحول بنا سکتے ہیں۔ کارکردگی کا مظاہرہ کرنے کا یہ دباؤ طلباء میں بے چینی اور جلن کا باعث بن سکتا ہے۔
محدود انفرادی توجہ:
کوچنگ سینٹرز میں کلاس کے بڑے سائز کی وجہ سے، انفرادی توجہ اور تاثرات محدود ہو سکتے ہیں۔ طلباء کو سوالات پوچھنے یا اپنے شکوک و شبہات کو پوری طرح واضح کرنے کا موقع نہیں مل سکتا ہے، جو تصورات کے بارے میں ان کی سمجھ میں رکاوٹ بن سکتا ہے۔
جامع ترقی کا فقدان:
کوچنگ مراکز بنیادی طور پر تعلیمی کامیابی پر مرکوز ہوتے ہیں اور ہو سکتا ہے کہ طلباء کو دیگر ہنر، جیسے قیادت، مواصلات یا تخلیقی صلاحیتوں کو فروغ دینے کے مواقع فراہم نہ کریں۔
سخت تدریسی انداز:
کوچنگ سینٹرز ایک ہی سائز کے تمام تدریسی طریقہ کار کی پیروی کر سکتے ہیں، جو مختلف سیکھنے کے انداز یا ترجیحات کے حامل طلباء کو پورا نہیں کر سکتا۔ یہ تصورات کو مؤثر طریقے سے سمجھنے کی ان کی صلاحیت کو روک سکتا ہے۔
امتحانات پر بہت زیادہ زور:
کوچنگ مراکز علم کی گہری سمجھ اور اطلاق کی حوصلہ افزائی کرنے کے بجائے طلباء کو مکمل طور پر امتحانات کے لیے تیار کرتے ہیں۔ اس کے نتیجے میں روٹ لرننگ ہو سکتی ہے اور حقیقی سیکھنے کی بجائے اعلیٰ اسکور حاصل کرنے پر توجہ مرکوز کی جا سکتی ہے۔
مواد پر حد سے زیادہ انحصار:
کوچنگ سینٹرز اکثر مطالعاتی مواد یا نوٹ فراہم کرتے ہیں، جن پر طلباء بہت زیادہ انحصار کر سکتے ہیں۔ یہ آزادانہ سوچ، تحقیق اور دیگر وسائل کی تلاش کی حوصلہ شکنی کر سکتا ہے۔
نظام میں سختی:
کوچنگ سینٹرز ایک مقررہ نصاب کی پیروی کر سکتے ہیں جو انفرادی ضروریات یا سیکھنے کے انداز کو پورا نہیں کر سکتا۔
ذاتی توجہ کا فقدان:
کوچنگ مراکز میں طلباء کی ایک بڑی تعداد ہو سکتی ہے، جس کی وجہ سے استاد کے لیے ہر طالب علم کو انفرادی توجہ دینا مشکل ہو جاتا ہے۔
دباؤ اور مسابقت:
کوچنگ کلاسز کا مسابقتی ماحول طلباء پر اچھی کارکردگی دکھانے کے لیے غیر ضروری دباؤ پیدا کر سکتا ہے، جس سے تناؤ اور اضطراب پیدا ہوتا ہے۔
ناکافی بنیادی ڈھانچہ:
تمام کوچنگ مراکز میں بنیادی ڈھانچے کی مناسب سہولیات نہیں ہوسکتی ہیں، جیسے لائبریری، لیبز، اور انٹرنیٹ کنیکٹیویٹی۔
جھوٹے وعدے:
کچھ کوچنگ مراکز امتحان میں کامیابی کے بارے میں غیر حقیقی وعدے کر سکتے ہیں، جو جھوٹی امید اور مایوسی کا باعث بنتے ہیں۔
وقت کی پابندیاں:
کوچنگ کلاسز میں طلبا کو ایک مقررہ شیڈول پر عمل کرنے کی ضرورت ہوتی ہے، جس سے ان کے پاس دیگر دلچسپیوں یا مشاغل کے حصول کے لیے بہت کم وقت ہوتا ہے۔
مقام کی رکاوٹیں:
کوچنگ سینٹرز ان طلباء کے لیے آسانی سے قابل رسائی نہیں ہو سکتے جو دور دراز علاقوں میں رہتے ہیں یا جن کے پاس نقل و حمل کے محدود اختیارات ہیں۔
اساتذہ کا معیار:
کوچنگ سینٹرز کے لیے فیکلٹی کا معیار ایک اور تشویش کا باعث ہے، ان میں سے کچھ کے پاس بہترین ٹیوٹرز ہونے کے باوجود، زیادہ تر متوقع یا وعدہ کردہ معیار تک نہیں پہنچ پاتے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں